دین اسلام نے عورتوں کو باعزت اور منفرد مقام دیا ہے جنہیں حقوق فراہم کئے بغیر معاشرتی ترقی ممکن نہیں۔مسزثمینہ امجد کریم 

فیصل آباد ( حشمت خان ) چیئرپرسن ارفع کریم فاؤنڈیشن مسزثمینہ امجد کریم نے کہا ہے کہ دین اسلام نے عورتوں کو باعزت اور منفرد مقام دیا ہے جنہیں حقوق فراہم کئے بغیر معاشرتی ترقی ممکن نہیں۔ قومی ترقی کے لئے خواتین کے کردار کو نظر انداز نہیں کیا جا سکتا لہذا انہیں قومی ترقی کے دھارے میں لانے کے لئے انقلابی اقدامات ناگزیر ہیں۔ اس سلسلے میں حکومت سے لے کر سماجی سطح تک خواتین کے بنیادی حقوق پر پاسداری انتہائی ضروری ہے ۔ یہ بات انہوں نے خواتین کے دن کے حوالے منعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہی ۔ انہوں نے کہا کہ بیٹی سے ماں سمیت ہر خواتین کو عزت و توقیر کا مقام دلائے بغیر کوئی بھی معاشرہ ترقی نہیں کر سکتا ہے ۔خواتین ہمارے سماج کا تقریبا نصف حصہ ہیں اسکے باوجود خواتین کے حقوق ادا نہیں کئے جاتے ۔ ملکی سطح پر خواتین کی تعمیر و ترقی کے لئے جتنے بھی اعلان کئے جاتے ہیں انکے نصف پر عمل نہیں کیا جاتا ۔ انہوں نے کہا کہ قوموں کی تقدیر کا دارومدار تعلیم کے فروغ میں ہی مضمر ہے۔ انہوں نے اپنی گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اگر آج بھی خواتین معاشرتی ناہمواریوں کی بھینٹ چڑھتی رہیں تو پھر ترقی کا خواب کبھی پورا نہیں ہو سکتا ہے یہ حقیقت ہے کہ عورت اور مرد گاڑی کے دو پہیے ہیں۔ ضرورت اس امر ہے کہ حکومت کے علاوہ معاشرے کا بھی فرض ہے کہ وہ اپنے اردگرد پر کڑی نظر رکھیں جہاں خواتین پر ظلم ہو رہا ہے اس کی حکومت کو نشاندہی کریں اور خواتین کے حقوق کی بحالی کے لئے موثر کردار ادا کریں ۔ والدین کو بھی چاہئے کہ بچوں کے ساتھ ساتھ بچیوں کی تعلیم و تربیت پر خصوصی توجہ دیں جو معاشرہ خواتین کی عزت و توقیر نہیں کر سکتا دلدل ہمیشہ اس کا مقدر بن جاتی ہے۔انہوں نے مزید کہاکہ آج کے اس ترقی یافتہ دور میں بھی خواتین کی سماجی اہمیت دوسرے درجے کے فرد جیسے ہے ۔ یہ حقیقت ایک عالمگیر سچائی کی صورت میں سامنے آچکی ہے کہ وہی معاشرے بہتر طور پر ترقی کر سکتے ہیں جن میں خواتین کی اہمیت کو تتسلیم کرتے ہوئے انکو برابر کے حقوق دئیے گئے ہیں ۔ اسلامی معاشرے نے عورت کو وہ حقوق دئیے ہیں جنکا دور جاہلیت میں تصورت کرنا ناممکن تھا ۔ ظہور اسلام سے پہلے اہل عرب اپنی اولادت کو مفلسی کے خلاف سے خصوصا لڑکیوں کی پیدائس کو انے لئے باعث عذاب سمجھ کف زندہ درگور کرتے دیتے اور اس عمل کو عزت و بہادری کی علامت سمجھا جاتالیکن نبی رحمت حضرت محمد صلی اﷲ علیہ وآلہ وسلم کی تشریف آوری کی بدولت ان بے قصور جانوں کو زندہ رہنے کا حق ملا

About The Author

CTN

You might be interested in

LEAVE YOUR COMMENT

Your email address will not be published. Required fields are marked *